سینیٹ کی سب قائمہ کمیٹی برائے میری ٹائم افیئرز کا گوادر پورٹ پر اجلاس

کوئٹہ: سینیٹ کی سب قائمہ کمیٹی برائے میری ٹائم افیئرز کا گوادر پورٹ پر اجلاس ہوا،اجلاس کی صدارت قائمہ کمیٹی کے کنوینیئر سینیٹر کہدہ بابر بلوچ نے کی۔ اجلاس میں سینیٹر کہدہ محمد اکرم بلوچ سمیت چیف کلیکٹر کسٹم، فائنانس اینڈ ڈویلپمنٹ ڈپارٹمنٹ کے حکام، چیئرمین گوادر پورٹ اتھارٹی، چینی کمپنی کے منتظمین اور دیگر اداروں کے اعلی افسران موجود تھے ۔اجلاس میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے میری ٹائم افیئرز کو گوادر پورٹ، گوادر فری زون اور پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کی تیاریوں کے متعلق تفصیلی بریفنگ دی گئی ۔اس موقع پر سینیٹ کی قائمہ سب کمیٹی کے کنوینئر سینیٹر کہدہ بابر بلوچ کا کہنا تھا کہ گوادر پورٹ پر پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ اور ہر قسم کی کارگو شپ ہینڈلنگ کیلئے تمام تر انتظامات مکمل اور گوادر پورٹ پر تمام سہولیات دستیاب ،جبکہ گوادر فری زون کے ٹوٹل 2003 ایکڑز رقبے پر ترقیاتی کام تیزی سے جاری ہیں جوکہ رواں سال کے آخر تک تکمیل پائیں گے. اس وقت فری زون کے ساٹھ ایکڑ رقبے پر دفاتر، اسٹوریج ہال اور کولڈ اسٹور کے تعمیر کا کام تکمیل کے آخری مراحل میں ہیں۔انھوں نے کہا کہ گوادر ایکسپریس وے پر بھی کام تیزی کے ساتھ جاری ہے۔ایکسپریس وے ایک بہت اہم پروجیکٹ ہے جس کی تکمیل کے بعد گوادر پورٹ مکران کوسٹل ہائی و ے سے منسلک ہوجائے گا۔کنوینیئر قائمہ کمیٹی کا کہنا تھا کہ افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کو گوادر پورٹ سے شروع کرنے کے حوالے سے حالیہ دنوں میں افغانستان کے حکام سے حکومتی سطح پر معاملات طے پا گئے ہیں کچھ ہی دنوں میں گوادر پورٹ سے افغان ٹرانزٹ ٹریڈ شروع ہو جائے گی. حکومت پاکستان ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو گوادر پورٹ پر سرمایہ کاری کیلئے بہترین سہولیات اور پرکشش مراعات دے گی.. انھوں نے.کہا کہ سیکورٹی کے حوالے سے گوادر پورٹ پر بہترین اقدامات کئے گئے ہیں۔انھوں نے کہا کہ حکومت پاکستان برادر ملک چین کی مدد اور تعاون سے 12 بلین روپے کی لاگت سے ڈسٹرکٹ گوادر کے ساحلی شہروں جیونی، پشکان اور پسنی میں ٹیکنیکل سینٹرز کھولے گی تاکہ وہاں کے نوجوان ان ٹیکنیکل سینٹرز سے فنی تعلیم حاصل کر سکیں۔گوادر پورٹ پر ‘پورٹ آپریشن سافٹ ویئر سسٹم’ اور فائبر آپٹیک کی خراب کارکردگی کی شکایات پر کنوینر قائمہ کمیٹی سینیٹر کہدہ بابر بلوچ نے کسٹم ، گوادر پورٹ اتھارٹی اور پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کے حکام کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا کہ ‘پورٹ آپریشن سافٹ ویئر سسٹم’ اور فائبر آپٹیک کے کام کو دو ہفتوں میں مکمل کرکے مجھے رپورٹ کریں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں